سائبر سکیورٹی آف پاکستان کی جانب سے 2020کی سالانہ رپورٹ شائع کر دی گئی ہے

سائبر سکیورٹی آف پاکستان کی جانب سے 2020کی سالانہ رپورٹ شائع کر دی گئی ہے جس میں سال 2020میں سائبر سکیورٹی آف پاکستان کی کارکردگی بیان کی گئی۔ رپورٹ کے مطابق گزشتہ سال میں مختلف اداروں و اضلاع سے تعلق رکھنے والے دو سو سے زائدنئے سائبر سکاؤٹس کو تربیت دی گئی تا کہ وہ اپنے اپنے اداروں و معاشرے میں سائبر سکیورٹی کے فروغ کے لیے کا م کرسکیں۔ اس کے علاوہ سائبر کرائم کا شکار ہونے والی خواتین کے لیے سٹریس کاؤنسلنگ ڈیسک قائم کیا گیا۔ سائبر کرائم کا شکار ہونے والی خواتین میں ذہنی تناؤ بڑھنے کی وجہ سے خود کشی کا رجحان بڑھنے لگا تھا جس پر قابو پانے کے لیے سٹریس کاؤنسلنگ ڈیسک قائم کیا گیا تا کہ ایسی خواتین کی کاؤنسلنگ کر کے ان کے ذہنی تناؤ کو کم کیا جا سکے۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ ایسی خواتین سائبر سکیورٹی آف پاکستان کے آن لائن پورٹل کے ذریعے سٹریس کاؤنسلنگ ڈیسک سے کسی بھی وقت رابطہ کر سکتے ہیں۔ اس سال سکولز، کالجز، یونیورسٹیز، پولیس، ریسکیو و دیگر اداروں کو سائبر سکیورٹی کے متعلق آگاہی سیمینار کروائے گئے۔ سائبر سکیورٹی آف پاکستان کی جانب سے نومبر میں سائبر مشقوں کا انعقاد کیا گیا تھا جس میں پولیس، ریسکیو، پبلک ریلیشن ڈیپارٹمنٹ،بینکوں، کالجز و دیگر اداروں کے آئی ٹی ماہرین نے شرکت کی۔ ان سائبر مشقوں کا مقصد ہنگامی صورتحال میں ہونے والے سائبر حملوں سے نمٹنے کے لیے خود کو تیار کرنا تھا۔ سائبر سکیورٹی آف پاکستان کی ویب سائٹ سے تفصیلی رپورٹ ڈاؤن لوڈ کی جا سکتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں